کپتان اپنی پارٹی کو لے کر ایک دفعہ پھر نمر 1۔۔۔ چودھری پرویز الہٰی ق لیگ کو تحریک انصاف میں ضم کرنے کیلئے تیار، حکومت نے اپوزیشن کو دن میں تارے دکھا دیئے

اسلام آباد (ویب ڈیسک )سینئر کالم نگار منصور آفاق اپنے کالم ’’تبدیلی کی تبدیلیاں ‘‘ میں لکھتے ہیں کہ ۔۔۔۔پی ٹی آئی کی حکومت کے لئے فارورڈ گروپ لائف لائن سے کم نہیں۔ حکومت کو بلیک میل کرنے والی سیاسی پارٹیوں کی حیثیت ختم ہو جائے گی۔ خاص طور پر قاف لیگ کا بہت نقصان ہوگا۔ ویسے

بھی اب چوہدری پرویز الٰہی کے پاس آ پشنز کم رہ گئے ہیں۔ موجودہ حکومت کو ملنے والی ایک اطلاع کے مطابق چوہدری صاحبان بھی اختلافات کے دور میں داخل ہو گئے ہیں۔مخالفین مشہور کر رہے ہیں کہ چچا زاد بھائیوں کے درمیان کئی مسائل بھی چل رہے ہیں۔ اس وقت منظر نامہ پر واضح ترین انداز میں دکھائی دینے والے پرویز الٰہی ہیں اور بعض رپورٹس کے مطابق مستقبل میں چوہدری گروپ یعنی قاف لیگ کی باگ ڈور مونس الٰہی کے پاس ہوسکتی ہے۔دوسری طرف افواہ ہے کہ پرویز الٰہی کے کزن اسے اپنا حق سمجھتے ہیں۔چوہدری ظہور الٰہی ان کے دادا تھے ۔ پی ٹی آئی کے حلقے یہ بھی کہتے ہیں کہ کسی زمانے میں چوہدری پرویز الٰہی قاف لیگ کو پی ٹی آئی میں ضم کرنے کیلئے تیار تھے۔ان کے خیال میں اس طرح وہ بڑی آسانی سے وزیر اعلیٰ پنجاب بن سکتے تھے مگر خاندان میں اس پر اتفاق نہ ہوسکا ۔افواہ ہے کہ آج کل پھر اس موضوع پر خاندان میں بحث مباحثہ زوروں پر ہے۔نیب نے اگر چوہدری برادران کے خاندان کے کسی فرد کو گرفتار کیا تو اس کا مطلب قاف لیگ اور پی ٹی آئی میں کھلم کھلا جنگ ہو گی۔اتحاد ٹوٹ جائے گا ۔جس کے قوی امکانات ہیں۔ الیکشن کمیشن نے پلی بارگین کرنے والوں کو عوامی عہدے کےلئے نا اہل قرار دیا ہے یعنی نئے نا اہلوں کی ایک لمبی لسٹ سامنے آنے والی ہے ۔

Sharing is caring!

Comments are closed.