مسلم لیگ (ن) کو پانچ کروڑ روپے کا چیک دینے والا کون تھا؟ غیرملکی فنڈنگ کیس کے دوران انتہائی اہم نکتہ اٹھا دیا گیا

اسلام آباد (ویب ڈیسک) الیکشن کمیشن نے پاکستان مسلم لیگ ن کے غیر ملکی ممنوعہ فنڈنگ سے متعلق کیس کی سماعت کے دوران مسلم لیگ ن کو تمام تفصیلات جمع کرانے کی ہدایت کرتے ہوئے کیس کی سماعت 3 جولائی تک ملتوی کر دی ہے ۔ منگل کے روز الیکشن کمیشن میں

مسلم لیگ ن فارن فنڈنگ کیس کی سماعت کے دوران مسلم لیگ ن وکیل اور درخواستگزار فرخ حبیب کے وکیل الیکشن کمیشن میں پیش ہوئے اس موقع پر درخواست گزار کے وکیل نے کمیشن کو بتایا کہ مسلم لیگ ن اپنے اکاؤنٹس کی تفصیلات سکروٹنی کمیٹی کو فراہم نہیں کر رہی ہے انہوں نے کہا کہ مسلم لیگ ن نے کروڑوں روپے کی فنڈنگ دینے والے 10 ڈونرز کے شناختی کارڈ نہیں دے سکی ہے ایک ڈونر نے پانچ کروڑ کا چیک مسلم لیگ ن کو دیا لیکن شناختی کارڈ ساتھ نہیں لگایا ہے اس موقع پر مسلم لیگ ن کے سیکرٹری جنرل احسن اقبال روسٹرم پر آگئے اور کہاکہ ہمارے اکاؤنٹس کی تمام تفصیلات ریکارڈ پر ہیں، فاضل وکیل اپنے موکل کی پارٹی کو مشورہ دیں کہ وہ بھی اپنے غیر ملکی اکائونٹس کی تفصیلات کمیشن کو فراہم کریں جس پر فرخ حبیب کے وکیل نے کہا کہ میرا پی ٹی آئی سے کوئی لینا دینا نہیں، میرا اپنا کیس ہے، مسلم لیگ ن اپنے اکاؤنٹس کی بات کرے الیکشن کمیشن نے مسلم لیگ ن کو تمام ریکارڈ سکروٹنی کمیٹی کو جمع کرانے کی ہدایت کرتے ہوئے سماعت 3 جولائی تک ملتوی کردی ہے۔ الیکشن کمیشن نے پی ٹی آئی فارن فنڈنگ کیس میں دائر متفرق درخواستوں پر تفصیلی سماعت کے بعد اپنا فیصلہ 30 جون تک محفوظ کر لیا، جبکہ الیکشن کمیشن نے جاری شدہ سکروٹنی کی کارروائی کو جلد ازجلد منطقی انجام تک پہچانے کی ہدایات بھی جاری کیں، الیکشن کمیشن 30 جون کو دوبارہ سکروٹنی کمیٹی کی کارروائی پر نظر ثانی کرے گا۔الیکشن کمیشن کی جانب سےجاری کردہ اعلامیےمیں کہاگیاہےکہ الیکشن کمیشن نے مختلف اہم نوعیت کے مقدمات کی سماعت کی،ان میں اکبر ایس بابر کی جانب سےپی ٹی آئی کے خلاف2014سےزیرسماعت مقدمہ میں دی جانےوالی متفرق درخواستوں پر سماعت ہوئی۔ اکبر ایس بابرنے روبرو سکروٹنی کمیٹی پی ٹی آئی کے خلاف مختلف نوعیت کی درخواستیں دی تھیں جن میں پی ٹی آئی کی طرف سے دھمکیوں کے خلاف نوٹس لینے اور سکروٹنی کمیٹی کے روبرو داخل شدہ تمام دستاویزات ریکار ڈ پر لانے وغیرہ کی استدعا کی گئی تھی جب کہ پی ٹی آئی کی طرف سے بھی ایک درخواست سکروٹنی کمیٹی کو دی گئی تھی جس میں معزز الیکشن کمیشن سےاستدعاکی تھی کہ سکروٹنی کی کارروائیاں میڈیاپر پبلک کرنےپراکبرایس بابر کےخلاف کارروائی عمل میں لائی جائے، سکروٹنی کمیٹی نے یہ تمام متفرق درخواستیں یکجاکرکےالیکشن کمیشن سےاستدعاکی کہ ان پرمناسب کارروائی عمل میں لائی جائے ۔

Sharing is caring!

Comments are closed.