مسٹرشی جن پنگ!!! ہم آپ سے مقابلے کی اہلیت نہیں رکھتا۔۔۔ بھارت نے اپنی شکست کا اعتراف کر تے ہوئے چین کےسامنے گٹنے ٹیک دیئے

نئی دہلی(ویب ڈیسک) بھارت کے اعلی برآمدی فروغ گروپ نے کہاہے کہ بھارت کا چینی اشیا کی درآمدات پر بہت زیادہ انحصار ہونے کی وجہ سے چینی اشیا کا بائیکاٹ کرنا قابل عمل نہیں تاہم نئی دہلی کو ان پر اپنا انحصار کم کرنے کی کوشش کرنی چاہیے۔دونوں ہمسائے ممالک کے درمیان جھڑپ میں 20 بھارتی فوجیوں

کی ہلاکت کے بعد بھارت کے اہم ترین چنائی پورٹ پر چین سے آنے والی کھیپ کو کسٹمز حکام نے اضافی چیکنگ کے لیے روک دیا ہے۔فیڈریشن آف انڈین ایکسپورٹ آرگنائزیشن (ایف آئی ای او) کے صدر شرد کمار کا کہنا تھا کہ ہم چین کے ساتھ حالیہ جھڑپ کے پیش نظر بھارت کو خود انحصار کرنے کے لیے حکومت کی حمایت کرتے ہیں تاہم ہمیں یہ بھی ذہن میں رکھنا چاہیے کہ ہم بہت سارے اہم خام مال کے لیے چین پر انحصار کرتے ہیں۔صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ حکومت کو بھارتی عوام سے ان چینی اشیا کی خریداری بند کرنے کا مطالبہ کرنا چاہیے جنہیں بھارتی کمپنیاں بھی بناتی ہوں تاہم چینی مصنوعات پر پابندی لگانے یا بائیکاٹ سے بھارتی صنعت کاروں کو نقصان پہنچے گا۔چین کی جنوبی پورٹ چنائی پر چین سے آنے والی کھیپ کی سخت جانچ پڑتال سے سپلائی چین میں خلل پڑ سکتا ہے۔واضح رہے کہ یہ پورٹ آٹوموبائل اور آٹو پارٹس سے لے کر کھاد اور پیٹرولیم مصنوعات تک کے سامان کا ذمہ دار ہے۔

Sharing is caring!

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *