Breaking News
Home / کہانیاں / ایک سچا واقعہ

ایک سچا واقعہ

پچهلے سال کی بات هے ایک دوست گول بازار سرگودها شاپنگ کر رها تھا اُس کی بیٹی کا فون آیا کہ ابو آپکے داماد نے مجهے فارغ کر دیا _علیحدگی د ے دی هے فورا آئیں اور مجهے لے جائیں بیٹی کی یہ بات سن کر وه دوست

بائیک دوڑاتا گهر کو واپس چلا ان هی سوچوں میں گم هو گا , راستے میں چلتی بائیک پر هارٹ اٹیک هوا بجلی کے پولسے ٹکرایا اور وهیں سڑک پر جان دے دی بظاهر یہ بات اتنی سی هے کہ هارٹ اٹیک هوا اور بنده فوت هو گیا وقت مقرر تها لیکن نہیں میں نہیں ماناکوئی بات تو تهی جو ایک اچهے بهلے صحت مند آدمی کی اچانک موت کا باعث بنی ۔ اِس میں کہیں نا کہیں تو انسانی غلطی نے بهی اپنا حصہ ڈالا هو گا علیحدگی کے کچهہ دن بعد میں بچی سے ملا اور پوچها کہ بی بی تین بچوں کیساتهہ خاوند نے جو تمہیں چهوڑ دیا کیا بات هوئی تهی تمہارا فسٹ کزن بهی تو تها بیٹی نے جو بهی وجہ بتائی وه مجهے سمجهہ نہیں آئی الزامات کی ایک لمبی فہرست تهی _ لیکن وه صاحبزادی مجهے کہیں بهی یہ نا بتا سکی کہ معاملات کی بہتری کیلئ خود اُس نے کیا کیا _ ؟ ایک بات میں نے بطور خاص نوٹ کی کہ محترمہ کے هاتهہ میں ڈیڑهہ لاکهہ والا آئی فون تها مرحوم دوست میرے رشتے دار بهی تهے اُنکا سابقہ داماد اعلی تعلیم یافتہ اور ایک محترم ادارے میں سکول ٹیچر هے _ چند دن بعد میں بطور خاص اُسے ملنے گیا پوچها کہ جوان تم جو اتنی انتہا پر پہنچے اپنے بچے تک چهوڑ دیے _کیا تمہیں بچے پیارے نا تهے _ هوا کیا تها کس بات نے تمہیں اتنا

مجبور کیا وه بولا کہ سر میری دو سالیاں هیں دونوں اِنتہائی امیر گهروں میں بیاهی هوئی کوٹهیوں کاروں اور نوکر چاکروں والی جب بهی میری بیوی اپنی بہنوں کو مل کر آتی میرے گهر جهگڑا شروع هو جاتا مجهے بات بات پر غریبی کے طعنے ملتے میں چالیس هزار ماهانہ کا ملازم هوں جتنا کر سکتا تها , اِنتہائی حد تک کیا لیکن اب بات برداشت سے باهر تهی اُس نے مزید کها که مجهے اپنی بیوی بہت پیاری تهی _ میرے پاس تین هزار والا موبائل هے _بیگم کو میں نے آئی فون لیکر دیا پهر کار کا مطالبہ هوا بنک لون سے کار لیکر دی پرانا فرج بیچ کر قسطوں پر فل سائز نیا فرج لیا_ پهر اے سی کا کہا گیا اے سی لیکر دیا اِس سب کے باوجود طعنے هی طعنے میں اپنی نظر میں هی حقیر بن چکا تها علیحدگی والے ماه بجلی کا بل تیس هزار آ گیا چالیس هزار کل تنخواه میں سے میں کیا کرتا دس هزار تو صرف ماهانہ دودهہ کا بل بنتا تها اُوپر سے بیگم کی فضول کی باتیں میں پہلے هی بیگم کی پچهلی لامحدود خواهشات سے تنگ تها بالکل ناک میں دم آ چکا تها۔فوری جهگڑا اُس بل پر هوا اور بات اِس انتہا تک پہنچی یہ بات کرتے کرتے وه رو پڑے

ساری بات سن کر میں نے اپنا سر جهکایا اور گهر واپس آ گیا_اللہ کا شکر ادا کیا کہ میں نے اپنی بیٹیوں کواپنے بیٹوں کو کم از کم خواهشات کیساتهہ زنده رهنا بتایا اس وقت وه علیحدگی یافتہ بیٹی اپنے شادی شده بهائی کے تین مرلہ مکان کے اوپر والے ایک کمرے میں ره رهی هے جب بجلی بند هو تو اِس کمرے میں بنده ایسے هو جاتا جیسے بهٹی میں دانے بهنتے هیں نا اوپر واش روم هے اور نا کچن بچے نیچے جائیں تو اُن کی ممانی تهپڑ لگا کر اوپر واپس بهگا دیتی هے _ گوری چٹی اور سرخ و سفید چهبیس سالہ لڑکی صرف ایک سال میں پچاس سال کی اماں نظر آتی هے سنا هے کسی پرائیویٹ سکول میں نو دس هزار کی نوکری بهی شروع کر دی ہے (کہانی حقیقت پر مبنی ہے ۔بہت سی بہنیں بہک جاتی ہیں کہانی تھوڑے فرق کے ساتھ سب کی ایک جیسی ہے خدارا سمجھداری سے کام لین اپنے گھر کو خود جنت بنائیں کسی کے بھی بہکاوے میں نا آئیں )

Share

About admin

Check Also

میری شادی ان پڑھ آدمی سے ہوئی ماڈرن لڑکی تھی اسکے مرجانے کی دعائیں مانگتی

میری شادی ایک ان پڑھ سے ہوئی تھی جبکہ میں پڑھی لکھی ہوںمیرا نام شہزادی …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Powered by themekiller.com